RSS

Tag Archives: شاعری

ایہے بچیاں نوں لفظ ضرور دسیو

 ٭۔۔ایہہ بچیاں نوں لفظ ضرور دسیو۔۔ ٭


تارا میرا کِنّوں تے رسونت کیہنوں کہندے نیں،
لاناں کیہنوں آکھدے تے اؤنت کیہنوں کہندے نیں!
ہندی کی نموشی تے فتور دسیو،
ایہے بچیاں نوں لفظ ضرور دسیو! 


ڈوکا کینہوں آکھدے  تے بولی کیہنوں کہندے نیں
ہندا کی اے بروو تے پوہلی کیہنوں کہندے نیں،
ہندی کی سڑنگھ تے سلامبھا کیہنوں کہندے نیں،
وڈیائی کی ہوندی تے الانبھا کیہنوں کہندے نیں!
نھیرناں،گندھوئی تے زمور دسیو،
ایہے بچیاں نوں لفظ ضرور دسیو!




دادے، نانکے، پتیئس ، پتیوئرے دسیو
کُڑم، شریکے، پیکے ، سوہرے دسیو
دنداسا، نتھّ، سرمہ تے متھے لٹ دسیو
پھاٹھ، ڈنگوترے، مراسی جاٹ نٹّ دسیو
چھمبھ، ٹوبھا کھوہ تے سانبھ کے تلاب رکھیو
آؤندی پیڑھی جوگا
سانبھ کے پنجاب رکھیو


 
پٹنا، چمکور، سرہند، ماچھیواڑا دسیو
چھنجھ، کشتی، بازی تے اکھاڑا دسیو


ہساؤنی، کہانی، ساکھیاں بات دسیو
ترکالاں، لوہڈھا، منہ نیہرا، پربھات دسیو
کہی، رمبی، تنگلی، جندرا، سلنگھ دسیو
پیڑھی ، منجا، موہڑا تے پلنگھ دسیو


سبھراؤ، مدکی، چیتے کھدرانا ڈھاب رکھیو
آؤندی پیڑھی جوگاسانبھ کے پنجاب رکھیو




 ٹھکّا پچّھوں تے پُرے دی پونڈ دسیو

 دُلّا جگا جیونا سانو کون دسیو 
گلوٹا چھکّو پونی کھڈی تانی دسیو
 جپ رہ راس سوھیلا انند بانی دسیو 
لیھا پَکھڑا سونڑاں سانبھ کے گلاب رکھیو
آؤندی پیڑھی جوگاسانبھ کے پنجاب رکھیو

رُگ تھبّی ستھری  تے پنڈ دسیو 
 نکھٹٗا چھڑا دھاجّو تے نالے رنڈ دسیو
 ٹپے سِٹھنی گھوڑیاں  سہاگ دسیو
 ڈپٹہ چنی پھلکاریاں تے باگ دسیو 
تہاڈ اک تارا تے سانبھ کے رباب رکھیو 
آؤندی پیڑھی جوگاسانبھ کے پنجاب رکھیو

 پیچون کھدو بارہ ٹہنی کھیڈ دسیو 

 دھوڑ جپّھہ کینچی پنڈی ریڈ دسیو
گپّھا بُک مُٹھ  نالے اوک دسیو
پٹھ لیلا بلونگڑا تے بوک دسیو
وِگھے مربعے تے کلّے دا حساب رکھیو
 آؤندی پیڑھی جوگاسانبھ کے پنجاب رکھیو


کلکاری، چیک، دہاڑ تے بڑک دسیو
چوز، اڑکھ، نخرہ تے مڑھک دسیو
پیہلاں، توتیاں ، نمولیاں ،بیر دسیو
پنسیری ، اَدھ پا، پائیا نالے سیر دسیو
لگام، کاٹھی پیراں ‘چ رکاب رکھیو
آؤندی پیڑھی جوگا
سانبھ کے پنجاب رکھیو

 
لٹھا ، ڈھبی، کھدر تے ململ دسیو
پر ، پرسوں ،بھلک تے نالے کل دسیو
پنجہ، جیتو، ننکانہ، نیلا تارہ دسیو
توی، چرکھڑی، دیگ دا نظارہ دسیو
چیتے پھولا، نلوآ، کپور تےنواب رکھیو
آؤندی پیڑھی جوگا
سانبھ کے پنجاب رکھیو

جنڈ ، ون، شریں تے ساگوان دسیو
لوک تتھّ، محاورے تے اَکھان دسیو
ساہل، گنیاں، رندا، کرنڈی، تیسی دسیو
بھورا، کمبل ، لوئی نالے کھیسی دسیو
مٹھے بول ویر، بھاجی تے جناب دسیو
آؤندی پیڑھی جوگا سانبھ کے پنجاب رکھیو

پورن کنہیا جیتا بدّھو شاد دسیو 
بیہی گلی ڈندا کچا راہ دسیو 
پیلو وارث ہاشم تے قادر یار دسیو 
لال تیجے گنگو کرپال جہے گدار دسیو
ڈیرے سادھ بابے بے نقاب رکھیو 
آؤندی پیڑھی جوگا سانبھ کے پنجاب رکھیو۔۔!



دھریک،لسوڑا تے دھتور دسیو،
ایہے بچیاں نوں لفظ ضرور دسیو! 

لانگا کیہنوں آکھدے تے کھوری کیہنوں کہندے نیں،
چوبر کیہنوں آکھدے تے گھوری کیہنوں کہندے نیں!
ہندا کی جوانی دا سرور دسیو،
ایہے بچیاں نوں لفظ ضرور دسیو!

سانبھ چوری، تیر ،گھڑا ،پٹّ دا کباب رکھیو

آؤندی پیڑھی جوگا سانبھ کے پنجاب رکھیو۔۔!  

 ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
Advertisements
 
تبصرہ کریں

Posted by پر 11 فروری, 2019 in Uncategorized

 

ٹیگز:

جھانجھر والے پیر نہیں بُھلے

 ٭ٹالھی والا گھر٭

 کِکّر، ٹاہلی، بیری، نِمّاں
پِپل، توت تے بوڑھ نئیں بُھلے
وٹاں بَنّے، نہر دا کنڈھا
اج تک پنڈ دے موڑ نئیں بھُلے

جمّوں  تے امرود نہیں بُھلے
ناں ای امب، لسوڑے بُھلے
ناں تے بُھلڈ پنجیری بُھلی
ناں پِنیاں، ناں پُوڑے بُھلے
 
 بلد پنجالی ہل نہیں بُھلی
 واہناں،وانگھی، گڈ نہیں بُھلی 
گادھی،ٹِنڈ نسار نہیں بُھلی 
کھوہ کھاڈا تے اڈ نہیں بُھلی 

اُکھلی تے نہیں مولھی بُھلی
 چِھکو، چھابی، چھج نہیں بُھلے
 سُگھڑ پن سگُچ نہیں بُھلے
 جاچ سُچج تے پچ نہیں بُھلے

‏جھانجھر والے پیر نہیں بُھلے
نتھلی والے نک نئیں بُھلے
روں توں کُولی بانہہ نئیں بُھلی
گندل ورگے لک نئیں بُھلے

اِک گنیاں دی روہ نئیں بُھلی
لسّیاں دے اوہ کَول نہیں بُھلے
سنگھنے دُدھ دی کھیر نہیں بُھلی
گُڑ دے مٹھے چول نہیں بُھلے

  سانجھ مروت پیار نہیں بُھلے
 ورھیوں سِک وراگ نہیں بُھلے
 لسن پلانہیں بوڑویں بُھلے 
مکی،مکھن،ساگ نہیں بُھلے

 رِجکا،موٹھ جوار نہیں بُھلی
 سرہوں، کنک کپاہ نہیں بھلی
 ہولاں تے نہیں سَتّو بُھلے 
لاچی لونگ دی چاہ نہیں بُھلی

مہندے تے نہیں وٹنے بُھلے
 جنج گھڑولی کھٹ نہیں بُھلے
 اک گھڑی جے گھول نہیں بُھلے
 میلے وی تے جھٹ نہیں بُھلے 

گُھگھی لالھی سہیڑ نہیں بُھلی 
شِکرے، لگڑ تے باج نہ بُھلے 
تاڑی تے نہیں ہاکر بُھلی 
رہیکلیاں دی واج نہ بُھلے 

کاپے تے نہیں ڈھانگے بُھلے
تیر کمان غُلیل نہیں بُھلی
 ٹیشن تے نہیں ٹانگے بُھلے
 آؤندی جاندی ریل نہیں بُھلی

 نِنگلاں،لاٹو ڈور نہیں بُھلی 
باگھڑ تے اخروٹ نہیں بُھلے
 یَسّو پنجو ہار نہیں بُھلے
  اج تک کَلّیاں جوٹ نہیں بُھلے

 چِبھڑ تے نہ پیلاں بھُلیاں
 نہ ای یار بھپولے بُھلے
 نہ ای گچک مرونڈے بُھلے 
نہ ٹانگر تے گولے بُھلے

 واواں ورگی ٹور نہیں بُھلی
 سپاں ورگی گُت نہیں بُھلی
 کِھڑ کِھڑ ہسدے دِن نہیں بُھلے
 گلاں کردی رُت نہیں بُھلی

 گلیاں دے رنگ روپ نہیں بُھلے
 رب جہے یار دا در نہیں بُھلیا
 وانساں آلی گُٹھ نہیں بُھلی
 ٹالھی والا گھر نہیں بُھلیا

 ارشاد سندھو

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

 
تبصرہ کریں

Posted by پر 25 دسمبر, 2018 in Uncategorized

 

ٹیگز:

غالب- ہوا ہے شہ کا مصاحب پھرے ہے اتراتا

  
ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے 
تمھیں کہو کہ یہ اندازِ گفتگو کیا ہے

 نہ شعلے میں یہ کرشمہ نہ برق میں یہ ادا 
کوئی بتاؤ کہ وہ شوخِ تند خو کیا ہے 

یہ رشک ہے کہ وہ ہوتا ہے ہم سخن تم سے
 وگرنہ خوفِ بد آموزیٔ عدو کیا ہے

 چپک رہا ہے بدن پر لہو سے پیراہن
 ہمارے جیب کو اب حاجتِ رفو کیا ہے

 جلا ہے جسم جہاں، دل بھی جل گیا ہوگا 
کریدتے ہو جو اب راکھ جستجو کیا ہے 

رگوں میں دوڑتے پھرنے کے ہم نہیں قائل 
جب آنکھ سے ہی نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے 

وہ چیز جس کے لیے ہم کو ہو بہشت عزیز 
سوائے بادۂ گل فامِ مشک بو کیا ہے

 پیوں شراب اگر خم بھی دیکھ لوں دو چار
 یہ شیشہ و قدح و کوزہ و سبو کیا ہے

 رہی نہ طاقتِ گفتار اور اگر ہو بھی
 تو کس امید پہ کہیے کہ آرزو کیا ہے

 ہوا ہے شہ کا مصاحب پھرے ہے اتراتا
 وگرنہ شہر میں غالبؔ کی آبرو کیا ہے !


 
1 تبصرہ

Posted by پر 9 دسمبر, 2018 in شاعری

 

ٹیگز:

ہوا ہے شہ کا مصاحب پھرے ہے اتراتا

  
ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے 
تمھیں کہو کہ یہ اندازِ گفتگو کیا ہے

 نہ شعلے میں یہ کرشمہ نہ برق میں یہ ادا 
کوئی بتاؤ کہ وہ شوخِ تند خو کیا ہے 

یہ رشک ہے کہ وہ ہوتا ہے ہم سخن تم سے
 وگرنہ خوفِ بد آموزیٔ عدو کیا ہے

 چپک رہا ہے بدن پر لہو سے پیراہن
 ہمارے جیب کو اب حاجتِ رفو کیا ہے

 جلا ہے جسم جہاں، دل بھی جل گیا ہوگا 
کریدتے ہو جو اب راکھ جستجو کیا ہے 

رگوں میں دوڑتے پھرنے کے ہم نہیں قائل 
جب آنکھ سے ہی نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے 

وہ چیز جس کے لیے ہم کو ہو بہشت عزیز 
سوائے بادۂ گل فامِ مشک بو کیا ہے

 پیوں شراب اگر خم بھی دیکھ لوں دو چار
 یہ شیشہ و قدح و کوزہ و سبو کیا ہے
 رہی نہ طاقتِ گفتار اور اگر ہو بھی
 تو کس امید پہ کہیے کہ آرزو کیا ہے
 ہوا ہے شہ کا مصاحب پھرے ہے اتراتا
 وگرنہ شہر میں غالبؔ کی آبرو کیا ہے !


 
1 تبصرہ

Posted by پر 9 دسمبر, 2018 in Uncategorized

 

ٹیگز:

میں نے سمجھا تھا پکوڑوں سے درخشاں ہے حیات

 مجھ سے پہلی سی افطاری میرے محبوب نہ مانگ
میں نے سمجھا تھا پکوڑوں سے درخشاں ہے حیات

حاصل ہیں اگر انگور تو مہنگائی کا جھگڑا کیا ہے
آلو بخارے سے ہے عالم میں بہاروں کو ثبات

بریانی جو مل جائے تو تقدیر نگوں ہو جائے
یوں نہ تھا فقط میں نے چاہا تھا یوں ہو جائے

اور بھی دکھ ہیں زمانے میں تربوز کچا نکلنے کے سوا
راحتیں اور بھی ہیں لذت کام و دہن کے سوا

ان گنت ترکیبوں سے پکائے گے جانوروں کے جسم
سیخوں پر چڑھے ہوئے کوئلوں پر جلائے گے
 

جابجا بکتے ہوئے کوچہ بازار میں سجائے ہوئے
مسالہ میں لتھڑے ہوئے، تیل میں نہائے ہوئے
 
 نان، نکلے ہوئے دہکتے ہوئے تندوروں سے
خوشبو نکلتی ہوئی مہکتے ہوئے خربوزوں سے

لوٹ جاتی ہے ادھر کو بھی نظر کیا کیجے
اب بھی دلکش ہے تیرا دسترخوان مگر کیجے

اور بھی دکھ ہیں زمانے میں کھانے پینے کے سوا
راحتیں اور بھی ہیں لذت کام و دہن کے سوا

مجھ سے پہلی سی افطاری میرے محبوب نہ مانگ 

 
تبصرہ کریں

Posted by پر 29 مئی, 2018 in Uncategorized

 

ٹیگز: ,

لوگ کہتے ہیں کہ ساغرؔ کو خدا یاد نہیں

ہے دعا یاد مگر حرف دعا یاد نہیں

میرے نغمات کو انداز نوا یاد نہیں

میں نے پلکوں سے در یار پہ دستک دی ہے

میں وہ سائل ہوں جسے کوئی صدا یاد نہیں

میں نے جن کے لیے راہوں میں بچھایا تھا لہو

ہم سے کہتے ہیں وہی عہد وفا یاد نہیں

کیسے بھر آئیں سر شام کسی کی آنکھیں

کیسے تھرائی چراغوں کی ضیا یاد نہیں

صرف دھندلائے ستاروں کی چمک دیکھی ہے

کب ہوا کون ہوا کس سے خفا یاد نہیں

زندگی جبر مسلسل کی طرح کاٹی ہے

جانے کس جرم کی پائی ہے سزا یاد نہیں

آؤ اک سجدہ کریں عالم مدہوشی میں

لوگ کہتے ہیں کہ ساغرؔ کو خدا یاد نہیں

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

 
تبصرہ کریں

Posted by پر 12 اگست, 2017 in Uncategorized

 

ٹیگز: ,

ساغر صدیقی – لوگ کہتے ہیں کہ ساغرؔ کو خدا یاد نہیں

ہے دعا یاد مگر حرف دعا یاد نہیں

میرے نغمات کو انداز نوا یاد نہیں

میں نے پلکوں سے در یار پہ دستک دی ہے

میں وہ سائل ہوں جسے کوئی صدا یاد نہیں

میں نے جن کے لیے راہوں میں بچھایا تھا لہو

ہم سے کہتے ہیں وہی عہد وفا یاد نہیں

کیسے بھر آئیں سر شام کسی کی آنکھیں

کیسے تھرائی چراغوں کی ضیا یاد نہیں

صرف دھندلائے ستاروں کی چمک دیکھی ہے

کب ہوا کون ہوا کس سے خفا یاد نہیں

زندگی جبر مسلسل کی طرح کاٹی ہے

جانے کس جرم کی پائی ہے سزا یاد نہیں

آؤ اک سجدہ کریں عالم مدہوشی میں

لوگ کہتے ہیں کہ ساغرؔ کو خدا یاد نہیں

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

 
تبصرہ کریں

Posted by پر 12 اگست, 2017 in شاعری

 

ٹیگز: