RSS

Tag Archives: شاعری

ایہے بچیاں نوں لفظ ضرور دسیو

 ٭۔۔ایہہ بچیاں نوں لفظ ضرور دسیو۔۔ ٭


تارا میرا کِنّوں تے رسونت کیہنوں کہندے نیں،
لاناں کیہنوں آکھدے تے اؤنت کیہنوں کہندے نیں!
ہندی کی نموشی تے فتور دسیو،
ایہے بچیاں نوں لفظ ضرور دسیو! 


ڈوکا کینہوں آکھدے  تے بولی کیہنوں کہندے نیں
ہندا کی اے بروو تے پوہلی کیہنوں کہندے نیں،
ہندی کی سڑنگھ تے سلامبھا کیہنوں کہندے نیں،
وڈیائی کی ہوندی تے الانبھا کیہنوں کہندے نیں!
نھیرناں،گندھوئی تے زمور دسیو،
ایہے بچیاں نوں لفظ ضرور دسیو!




دادے، نانکے، پتیئس ، پتیوئرے دسیو
کُڑم، شریکے، پیکے ، سوہرے دسیو
دنداسا، نتھّ، سرمہ تے متھے لٹ دسیو
پھاٹھ، ڈنگوترے، مراسی جاٹ نٹّ دسیو
چھمبھ، ٹوبھا کھوہ تے سانبھ کے تلاب رکھیو
آؤندی پیڑھی جوگا
سانبھ کے پنجاب رکھیو


 
پٹنا، چمکور، سرہند، ماچھیواڑا دسیو
چھنجھ، کشتی، بازی تے اکھاڑا دسیو


ہساؤنی، کہانی، ساکھیاں بات دسیو
ترکالاں، لوہڈھا، منہ نیہرا، پربھات دسیو
کہی، رمبی، تنگلی، جندرا، سلنگھ دسیو
پیڑھی ، منجا، موہڑا تے پلنگھ دسیو


سبھراؤ، مدکی، چیتے کھدرانا ڈھاب رکھیو
آؤندی پیڑھی جوگاسانبھ کے پنجاب رکھیو




 ٹھکّا پچّھوں تے پُرے دی پونڈ دسیو

 دُلّا جگا جیونا سانو کون دسیو 
گلوٹا چھکّو پونی کھڈی تانی دسیو
 جپ رہ راس سوھیلا انند بانی دسیو 
لیھا پَکھڑا سونڑاں سانبھ کے گلاب رکھیو
آؤندی پیڑھی جوگاسانبھ کے پنجاب رکھیو

رُگ تھبّی ستھری  تے پنڈ دسیو 
 نکھٹٗا چھڑا دھاجّو تے نالے رنڈ دسیو
 ٹپے سِٹھنی گھوڑیاں  سہاگ دسیو
 ڈپٹہ چنی پھلکاریاں تے باگ دسیو 
تہاڈ اک تارا تے سانبھ کے رباب رکھیو 
آؤندی پیڑھی جوگاسانبھ کے پنجاب رکھیو

 پیچون کھدو بارہ ٹہنی کھیڈ دسیو 

 دھوڑ جپّھہ کینچی پنڈی ریڈ دسیو
گپّھا بُک مُٹھ  نالے اوک دسیو
پٹھ لیلا بلونگڑا تے بوک دسیو
وِگھے مربعے تے کلّے دا حساب رکھیو
 آؤندی پیڑھی جوگاسانبھ کے پنجاب رکھیو


کلکاری، چیک، دہاڑ تے بڑک دسیو
چوز، اڑکھ، نخرہ تے مڑھک دسیو
پیہلاں، توتیاں ، نمولیاں ،بیر دسیو
پنسیری ، اَدھ پا، پائیا نالے سیر دسیو
لگام، کاٹھی پیراں ‘چ رکاب رکھیو
آؤندی پیڑھی جوگا
سانبھ کے پنجاب رکھیو

 
لٹھا ، ڈھبی، کھدر تے ململ دسیو
پر ، پرسوں ،بھلک تے نالے کل دسیو
پنجہ، جیتو، ننکانہ، نیلا تارہ دسیو
توی، چرکھڑی، دیگ دا نظارہ دسیو
چیتے پھولا، نلوآ، کپور تےنواب رکھیو
آؤندی پیڑھی جوگا
سانبھ کے پنجاب رکھیو

جنڈ ، ون، شریں تے ساگوان دسیو
لوک تتھّ، محاورے تے اَکھان دسیو
ساہل، گنیاں، رندا، کرنڈی، تیسی دسیو
بھورا، کمبل ، لوئی نالے کھیسی دسیو
مٹھے بول ویر، بھاجی تے جناب دسیو
آؤندی پیڑھی جوگا سانبھ کے پنجاب رکھیو

پورن کنہیا جیتا بدّھو شاد دسیو 
بیہی گلی ڈندا کچا راہ دسیو 
پیلو وارث ہاشم تے قادر یار دسیو 
لال تیجے گنگو کرپال جہے گدار دسیو
ڈیرے سادھ بابے بے نقاب رکھیو 
آؤندی پیڑھی جوگا سانبھ کے پنجاب رکھیو۔۔!



دھریک،لسوڑا تے دھتور دسیو،
ایہے بچیاں نوں لفظ ضرور دسیو! 

لانگا کیہنوں آکھدے تے کھوری کیہنوں کہندے نیں،
چوبر کیہنوں آکھدے تے گھوری کیہنوں کہندے نیں!
ہندا کی جوانی دا سرور دسیو،
ایہے بچیاں نوں لفظ ضرور دسیو!

سانبھ چوری، تیر ،گھڑا ،پٹّ دا کباب رکھیو

آؤندی پیڑھی جوگا سانبھ کے پنجاب رکھیو۔۔!  

 ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
 
تبصرہ کریں

Posted by پر 11 فروری, 2019 in Uncategorized

 

ٹیگز:

جھانجھر والے پیر نہیں بُھلے

 ٭ٹالھی والا گھر٭

 کِکّر، ٹاہلی، بیری، نِمّاں
پِپل، توت تے بوڑھ نئیں بُھلے
وٹاں بَنّے، نہر دا کنڈھا
اج تک پنڈ دے موڑ نئیں بھُلے

جمّوں  تے امرود نہیں بُھلے
ناں ای امب، لسوڑے بُھلے
ناں تے بُھلڈ پنجیری بُھلی
ناں پِنیاں، ناں پُوڑے بُھلے
 
 بلد پنجالی ہل نہیں بُھلی
 واہناں،وانگھی، گڈ نہیں بُھلی 
گادھی،ٹِنڈ نسار نہیں بُھلی 
کھوہ کھاڈا تے اڈ نہیں بُھلی 

اُکھلی تے نہیں مولھی بُھلی
 چِھکو، چھابی، چھج نہیں بُھلے
 سُگھڑ پن سگُچ نہیں بُھلے
 جاچ سُچج تے پچ نہیں بُھلے

‏جھانجھر والے پیر نہیں بُھلے
نتھلی والے نک نئیں بُھلے
روں توں کُولی بانہہ نئیں بُھلی
گندل ورگے لک نئیں بُھلے

اِک گنیاں دی روہ نئیں بُھلی
لسّیاں دے اوہ کَول نہیں بُھلے
سنگھنے دُدھ دی کھیر نہیں بُھلی
گُڑ دے مٹھے چول نہیں بُھلے

  سانجھ مروت پیار نہیں بُھلے
 ورھیوں سِک وراگ نہیں بُھلے
 لسن پلانہیں بوڑویں بُھلے 
مکی،مکھن،ساگ نہیں بُھلے

 رِجکا،موٹھ جوار نہیں بُھلی
 سرہوں، کنک کپاہ نہیں بھلی
 ہولاں تے نہیں سَتّو بُھلے 
لاچی لونگ دی چاہ نہیں بُھلی

مہندے تے نہیں وٹنے بُھلے
 جنج گھڑولی کھٹ نہیں بُھلے
 اک گھڑی جے گھول نہیں بُھلے
 میلے وی تے جھٹ نہیں بُھلے 

گُھگھی لالھی سہیڑ نہیں بُھلی 
شِکرے، لگڑ تے باج نہ بُھلے 
تاڑی تے نہیں ہاکر بُھلی 
رہیکلیاں دی واج نہ بُھلے 

کاپے تے نہیں ڈھانگے بُھلے
تیر کمان غُلیل نہیں بُھلی
 ٹیشن تے نہیں ٹانگے بُھلے
 آؤندی جاندی ریل نہیں بُھلی

 نِنگلاں،لاٹو ڈور نہیں بُھلی 
باگھڑ تے اخروٹ نہیں بُھلے
 یَسّو پنجو ہار نہیں بُھلے
  اج تک کَلّیاں جوٹ نہیں بُھلے

 چِبھڑ تے نہ پیلاں بھُلیاں
 نہ ای یار بھپولے بُھلے
 نہ ای گچک مرونڈے بُھلے 
نہ ٹانگر تے گولے بُھلے

 واواں ورگی ٹور نہیں بُھلی
 سپاں ورگی گُت نہیں بُھلی
 کِھڑ کِھڑ ہسدے دِن نہیں بُھلے
 گلاں کردی رُت نہیں بُھلی

 گلیاں دے رنگ روپ نہیں بُھلے
 رب جہے یار دا در نہیں بُھلیا
 وانساں آلی گُٹھ نہیں بُھلی
 ٹالھی والا گھر نہیں بُھلیا

 ارشاد سندھو

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

 
تبصرہ کریں

Posted by پر 25 دسمبر, 2018 in Uncategorized

 

ٹیگز:

غالب- ہوا ہے شہ کا مصاحب پھرے ہے اتراتا

  
ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے 
تمھیں کہو کہ یہ اندازِ گفتگو کیا ہے

 نہ شعلے میں یہ کرشمہ نہ برق میں یہ ادا 
کوئی بتاؤ کہ وہ شوخِ تند خو کیا ہے 

یہ رشک ہے کہ وہ ہوتا ہے ہم سخن تم سے
 وگرنہ خوفِ بد آموزیٔ عدو کیا ہے

 چپک رہا ہے بدن پر لہو سے پیراہن
 ہمارے جیب کو اب حاجتِ رفو کیا ہے

 جلا ہے جسم جہاں، دل بھی جل گیا ہوگا 
کریدتے ہو جو اب راکھ جستجو کیا ہے 

رگوں میں دوڑتے پھرنے کے ہم نہیں قائل 
جب آنکھ سے ہی نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے 

وہ چیز جس کے لیے ہم کو ہو بہشت عزیز 
سوائے بادۂ گل فامِ مشک بو کیا ہے

 پیوں شراب اگر خم بھی دیکھ لوں دو چار
 یہ شیشہ و قدح و کوزہ و سبو کیا ہے

 رہی نہ طاقتِ گفتار اور اگر ہو بھی
 تو کس امید پہ کہیے کہ آرزو کیا ہے

 ہوا ہے شہ کا مصاحب پھرے ہے اتراتا
 وگرنہ شہر میں غالبؔ کی آبرو کیا ہے !


 
1 تبصرہ

Posted by پر 9 دسمبر, 2018 in شاعری

 

ٹیگز:

ہوا ہے شہ کا مصاحب پھرے ہے اتراتا

  
ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے 
تمھیں کہو کہ یہ اندازِ گفتگو کیا ہے

 نہ شعلے میں یہ کرشمہ نہ برق میں یہ ادا 
کوئی بتاؤ کہ وہ شوخِ تند خو کیا ہے 

یہ رشک ہے کہ وہ ہوتا ہے ہم سخن تم سے
 وگرنہ خوفِ بد آموزیٔ عدو کیا ہے

 چپک رہا ہے بدن پر لہو سے پیراہن
 ہمارے جیب کو اب حاجتِ رفو کیا ہے

 جلا ہے جسم جہاں، دل بھی جل گیا ہوگا 
کریدتے ہو جو اب راکھ جستجو کیا ہے 

رگوں میں دوڑتے پھرنے کے ہم نہیں قائل 
جب آنکھ سے ہی نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے 

وہ چیز جس کے لیے ہم کو ہو بہشت عزیز 
سوائے بادۂ گل فامِ مشک بو کیا ہے

 پیوں شراب اگر خم بھی دیکھ لوں دو چار
 یہ شیشہ و قدح و کوزہ و سبو کیا ہے
 رہی نہ طاقتِ گفتار اور اگر ہو بھی
 تو کس امید پہ کہیے کہ آرزو کیا ہے
 ہوا ہے شہ کا مصاحب پھرے ہے اتراتا
 وگرنہ شہر میں غالبؔ کی آبرو کیا ہے !


 
1 تبصرہ

Posted by پر 9 دسمبر, 2018 in Uncategorized

 

ٹیگز:

میں نے سمجھا تھا پکوڑوں سے درخشاں ہے حیات

 مجھ سے پہلی سی افطاری میرے محبوب نہ مانگ
میں نے سمجھا تھا پکوڑوں سے درخشاں ہے حیات

حاصل ہیں اگر انگور تو مہنگائی کا جھگڑا کیا ہے
آلو بخارے سے ہے عالم میں بہاروں کو ثبات

بریانی جو مل جائے تو تقدیر نگوں ہو جائے
یوں نہ تھا فقط میں نے چاہا تھا یوں ہو جائے

اور بھی دکھ ہیں زمانے میں تربوز کچا نکلنے کے سوا
راحتیں اور بھی ہیں لذت کام و دہن کے سوا

ان گنت ترکیبوں سے پکائے گے جانوروں کے جسم
سیخوں پر چڑھے ہوئے کوئلوں پر جلائے گے
 

جابجا بکتے ہوئے کوچہ بازار میں سجائے ہوئے
مسالہ میں لتھڑے ہوئے، تیل میں نہائے ہوئے
 
 نان، نکلے ہوئے دہکتے ہوئے تندوروں سے
خوشبو نکلتی ہوئی مہکتے ہوئے خربوزوں سے

لوٹ جاتی ہے ادھر کو بھی نظر کیا کیجے
اب بھی دلکش ہے تیرا دسترخوان مگر کیجے

اور بھی دکھ ہیں زمانے میں کھانے پینے کے سوا
راحتیں اور بھی ہیں لذت کام و دہن کے سوا

مجھ سے پہلی سی افطاری میرے محبوب نہ مانگ 

 
تبصرہ کریں

Posted by پر 29 مئی, 2018 in Uncategorized

 

ٹیگز: ,

لوگ کہتے ہیں کہ ساغرؔ کو خدا یاد نہیں

ہے دعا یاد مگر حرف دعا یاد نہیں

میرے نغمات کو انداز نوا یاد نہیں

میں نے پلکوں سے در یار پہ دستک دی ہے

میں وہ سائل ہوں جسے کوئی صدا یاد نہیں

میں نے جن کے لیے راہوں میں بچھایا تھا لہو

ہم سے کہتے ہیں وہی عہد وفا یاد نہیں

کیسے بھر آئیں سر شام کسی کی آنکھیں

کیسے تھرائی چراغوں کی ضیا یاد نہیں

صرف دھندلائے ستاروں کی چمک دیکھی ہے

کب ہوا کون ہوا کس سے خفا یاد نہیں

زندگی جبر مسلسل کی طرح کاٹی ہے

جانے کس جرم کی پائی ہے سزا یاد نہیں

آؤ اک سجدہ کریں عالم مدہوشی میں

لوگ کہتے ہیں کہ ساغرؔ کو خدا یاد نہیں

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

 
تبصرہ کریں

Posted by پر 12 اگست, 2017 in Uncategorized

 

ٹیگز: ,

ساغر صدیقی – لوگ کہتے ہیں کہ ساغرؔ کو خدا یاد نہیں

ہے دعا یاد مگر حرف دعا یاد نہیں

میرے نغمات کو انداز نوا یاد نہیں

میں نے پلکوں سے در یار پہ دستک دی ہے

میں وہ سائل ہوں جسے کوئی صدا یاد نہیں

میں نے جن کے لیے راہوں میں بچھایا تھا لہو

ہم سے کہتے ہیں وہی عہد وفا یاد نہیں

کیسے بھر آئیں سر شام کسی کی آنکھیں

کیسے تھرائی چراغوں کی ضیا یاد نہیں

صرف دھندلائے ستاروں کی چمک دیکھی ہے

کب ہوا کون ہوا کس سے خفا یاد نہیں

زندگی جبر مسلسل کی طرح کاٹی ہے

جانے کس جرم کی پائی ہے سزا یاد نہیں

آؤ اک سجدہ کریں عالم مدہوشی میں

لوگ کہتے ہیں کہ ساغرؔ کو خدا یاد نہیں

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

 
تبصرہ کریں

Posted by پر 12 اگست, 2017 in شاعری

 

ٹیگز:

ساغر صدیقی- جس عہد میں لٹ جائے فقیروں کی کمائی



  برگشتۂ یزدان سے کچھ بھول ہوئی ہے

بھٹکے ہوئے انسان سے کچھ بھول ہوئی ہے

تا حد نظر شعلے ہی شعلے ہیں چمن میں

پھولوں کے نگہبان سے کچھ بھول ہوئی ہے

جس عہد میں لٹ جائے فقیروں کی کمائی

اس عہد کے سلطان سے کچھ بھول ہوئی ہے

ہنستے ہیں مری صورت مفتوں پہ شگوفے

میرے دل نادان سے کچھ بھول ہوئی ہے

حوروں کی طلب اور مے و ساغر سے ہے نفرت

زاہد ترے عرفان سے کچھ بھول ہوئی ہے

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ساغر صدیقی نے ایک مرتبہ کہا تھا:
میری ماں دلی کی تھی، باپ پٹیالے کا، پیدا امرتسر میں ہوا، زندگی لاہور میں گزاری! میں بھی عجیب چوں چوں کا مربّہ ہوں"
اس قول میں صرف ایک معمولی غلطی کے سوا اور سب سچ ہے۔
اصل خاندان ان کا انبالے سے تھا اور وہ پیدا بھی انبالے میں ہوئے۔ سال 1964ء کا تھا۔ گھر میں ہر طرف افلاس اور نکبت کا دور دورہ تھا۔ ایسے میں تعلیم کا کیا سوال! محلے میں ایک بزرگ حبیب حسن رہتے تھے، انہیں کے پاس جانے آنے لگے۔ جو کچھ‍ پڑھا انہیں سے اس کے بعد شاید ورنیکلر مڈل کے کچھ‍ درجے بھی پاس کر لیے ہوں۔ ایک دن انہوں نے اس ماحول سے تنگ آکر  امرتسر کی راہ لی اور یہاں ہال بازار میں ایک دوکاندار کے وہاں ملازم ہو گئےجو لکڑی کی کنگھیاں بنا کر فروخت کیا کرتا تھا۔ انہوں نے بھی یہ کام سیکھ‍ لیا۔ دن بھر کنگھیاں بناتے اور رات کو اسی دوکان کے کسی گوشے میں پڑے رہتے۔ لیکن شعر وہ اس 14، 15 برس کے عرصے میں ہی کہنے لگے تھے اور اتنے بے تکلف دوستوں کی محفل میں سناتے بھی تھے۔ شروع میں تخلص ناصر مجازی تھا لیکن جلد ہی اسے چھوڑ کر ساغر صدیقی ہو گئے۔
ساغر کی اصل شہرت 1944ء میں ہوئی۔ اس سال امرتسر میں ایک بڑے پیمانے پر مشاعرہ قرار پایا۔ اس میں شرکت کے لیے لاہور کے بعض شاعر بھی مدعو تھے۔ ان میں ایک صاحب کو معلوم ہوا کہ یہ "لڑکا” (ساغر صدیقی) بھی شعر کہتا ہے۔ انہوں نے منتظمین سے کہہ کر اسے مشاعرے میں پڑھنے کا موقع دلوا دیا۔ ساغر کی آواز میں بلا کا سوز تھا اور وہ ترنم میں پڑھنے میں جواب نہیں رکھتا تھا۔ بس پھر کیا تھا، اس شب اس نے صحیح معنوں میں مشاعرہ لوٹ لیا۔
قدرتاً،  اس کے بعد امرتسر اور لاہور کے مشاعروں میں اس کی مانگ بڑھ‍ گئی۔ اب اس نے کنگھیاں بنانے کا کام چھوڑ دیا اور بعض سرپرست احباب کی مدد سے اپنا علم اور صلاحیت بڑھانے کی کوشش کی۔ مشاعروں میں شرکت کے باعث اتنی یافت ہو جاتی تھی کہ اسے اپنا پیٹ پالنے کے لیے مزید تگ و دو کی ضرورت نہ رہی۔ گھر والے بے شک ناراض تھے کہ لڑکا آوارہ ہو گیا ہے اور کوئی کام نہیں کرتا۔ لیکن اسے ان کی کیا پروا تھی، اس نے گھر آنا جانا ہی چھوڑ دیا۔ کلام پر اصلاح لینے کے لیے لطیف انور گورداسپوری مرحوم کا انتخاب کیا اور ان سے بہت فیض اٹھایا۔
1947ء میں پاکستان بنا تو وہ امرتسر سے لاہور چلا گیا۔ یہاں دوستوں نے اسے ہاتھوں ہاتھ‍ لیا۔ اس کا کلام مختلف پرچوں میں چھپنے لگا۔ سینما فلم بنانے والوں نے اسے گیتوں کی فرمائش کی اور اسے حیرتناک کامیابی ہوئی۔ اس دور کی متعدد فلموں کے گیت ساغر کے لکھے ہوئے ہیں۔ اس زمانے میں اس کے سب سے بڑے سرپرست انور کمال پاشا (ابن حکیم احمد شجاع مرحوم) تھے۔ جو پاکستان میں فلم سازی کی صنعت کے بانیوں میں ہیں۔ انہوں نے اپنی بیشتر فلموں کے گانے ساحر سے لکھوائے اور یہ بہت مقبول ہوئے۔
1947ء سے 1952 تک ساغر کی زندگی کا زرّیں دور کہا جا سکتا ہے۔ وہ لاہور کے کئی روزانہ اور ہفتہ وار پرچوں سے منسلک ہوگیا، بلکہ بعض جریدے تو اسی کی ادارت میں شائع ہوتے رہے۔ لیکن اس کے بعد شامت اعمال سے حالات نے ایسا پلٹا کھایا کہ وہ کہیں کا نہ رہا اور آخیر میں صحیح معنوں میں مرقّع عبرت بن گیا۔
1952ء کی بات ہے کہ وہ ایک ادبی ماہنامے کے دفتر میں بیٹھے تھے۔ انہوں نے سردرد اور اضمحلال کی شکایت کی۔ پاس ہی ایک اور شاعر دوست بھی بیٹھے۔ انہوں نے تعلق خاطر کا اظہار کیا اور اخلاص ہمدردی میں انہیں مارفیا کا ٹیکہ لگا دیا۔ سردرد اور اضمحلال تو دور ہو گیا لیکن اس معمولی واقعے نے ان کے جسم کے اندر نشّہ بازی کے تناور درخت کا بیج بو دیا۔ بدقسمتی سے ایک اور واقعے نے اس رجحان کو مزید تقویت دی۔
اس زمانے میں وہ انارکلی لاہور میں ایک دوست کے والد (جو پیشہ کے لحاظ سے ڈاکٹر تھے) مطب کی اوپر کی منزل میں رہتے تھے۔ اسی کمرے میں ان کے ساتھ‍ ایک دوست بھی مقیم تھے (اب نام کیا لکھوں) ان صاحب کو ہر طرح کے نشوں کی عادت تھی۔ ہوتی کو کون ٹال سکتا ہے۔ ان کی صحبت میں ساغر بھی رفتہ رفتہ اولا بھنگ اور شراب اور ان سے گزر کر افیون اور چرس کے عادی ہوگئے۔ اگر کوئی راہ راست سے بھٹک جائے اور توفیق ایزدی اس کی دستگیری نہ کرے، تو پھر اس کا تحت الثری سے ادھر کوئی ٹھکانہ نہیں رہتا۔
یہی ساغر کے ساتھ‍ ہوا اور افسوس سے کہنا پڑتا ہے کہ خود ان کے دوستوں میں سے بیشتر ان کے ساتھ‍ ظلم کیا۔ یہ لوگ انہیں چرس کی پڑیا اور مارفیا کے ٹیکے کی شیشیاں دیتے اور ان سے غزلیں اور گیت لے جاتے، اپنے نام سے پڑھتے اور چھپواتے اور بحیثیت شاعر اور گیت کار اپنی شہرت میں اضافہ کرتے۔ اس کے بعد اس نے رسائل اور جرائد کے دفتر اور فلموں کے اسٹوڈیو آنا جانا چھوڑ دیا۔ اس میں بھی کوئی مبالغہ نہیں کہ اداروں کے کرتا دھرتا اس کے کام کی اجرت کے دس روپے بھی اس وقت ادا نہیں کرتے تھے، جب وہ ان کے در دولت کی چوکھٹ پر دس سجدے نہ کرے۔ اس نے ساغر کے مزاج کی تلخی اور دنیا بیزاری اور ہر وقت "بے خود” رہنے کی خواہش میں اضافہ کیا اور بالکل آوارہ ہوگیا۔ نوبت بايں رسید کہ کہ کبھی وہ ننگ دھڑنگ ایک ہی میلی کچیلی چادر اوڑھے اور کبھی چیتھڑوں میں ملبوس، بال بکھرائے ننگے پانو۔۔۔۔ منہ میں بیڑی یا سگریٹ لیے سڑکوں پر پھرتا رہتا اور رات کو نشے میں دھت مدہوش کہیں کسی سڑک کے کنارے کسی دوکان کے تھڑے یا تخت کے اوپر یا نیچے پڑا رہتا۔
اب اس کی یہ عادت ہو گئی کہ کہیں کوئی اچھے وقتوں کا دوست مل جاتا تو اس سے ایک چونی طلب کرتا۔ اس کی یہ چونی مانگنے کی عادت سب کو معلوم تھی چنانچہ بار بار ایسا ہوا کہ کسی دوست نے اسے سامنے سے آتے دیکھا اور فورا جیب سے چونّی نکال کر ہاتھ‍ میں لے لی۔ پاس پہنچے اور علیک سلیک کے بعد مصافحہ کرتے وقت چونی ساغر کے ہاتھ‍ میں چھوڑ دی۔ وہ باغ باغ ہو جاتا۔ یوں شام تک جو دس بیس روپے جمع ہو جاتے، وہ اس دن کے چرس اور مارفیا کے کام آتے۔ فاعتبروا یا اولی الابصار۔
جنوری1974ء میں اس پر فالج کا حملہ ہوا اس کا علاج بھی چرس اور مارفیا سے کیا گیا۔ فالج سے تو بہت حد تک نجات مل گئی، لیکن اس سے دایاں ہاتھ‍ ہمیشہ کے لیے بے کار ہو گیا۔ پھر کچھ‍ دن بعد منہ سے خون آنے لگا۔ اور یہ آخر تک دوسرے تیسرے جاری رہا۔ ان دنوں خوراک برائے نام تھی۔ جسم سوکھ‍ کر ہڈیوں کا ڈھانچہ رہ گیا تھا۔ سب کو معلوم تھا کہ اب وہ دن دور نہیں جب وہ کسی سے چونی نہیں مانگے گا۔ چنانچہ 19 جولائی 1974ء صبح کے وقت اس کی لاش سڑک کے کنارے ملی اور دوستوں نے لے جا کر اسے میانی صاحب کے قبرستان میں دفن کر دیا۔

ساغر نے غزل، نظم، قطعہ، رباعی، ہر صنف سخن میں خاصا ذخیرہ چھوڑا ہے وہ خود تو اسے کیا چھپواتا، ناشروں نے اپنے نفع کی خاطر اسے چھاپ لیا اور اسے معاوضے میں ایک حبّہ تک نہ دیا۔ چھ‍ مجموعے اس کی زندگی میں لاہور سے چھپے۔ غم بہار، زہر آرزو(1946ء)، لوح جنوں( 1971ء)، اور سبز گنبد اور شب آگئی (1972ء) یقین ہے کہ اگر کوشش کی جائے تو ایک اور مجموعے کا مواد بآسانی مہیّا ہو سکتا ہے۔ ساغر کا کلام بہت جاندار ہے اور زندہ رہنے کا مستحق۔
 اکتوبر 1958ء میں پاکستان میں فوجی انقلاب میں محمد ایوب بر سر اقتدار آگئے اور تمام سیاسی پارٹیاں اور سیاست داں جن کی باہمی چپقلش اور رسہ کشی سے عوام تنگ آ چکے تھے۔ حرف غلط کی طرح فراموش کر دیے گئے۔ لوگ اس تبدیلی پر واقعی خوش تھے۔ ساغر نے اسی جذبے کا اظہار ایک نظم میں کیا ہے، اس میں ایک مصرع تھا؛
کیا ہے صبر جو ہم نے، ہمیں ایوب ملا
یہ نظم جرنیل محمد ایوب کی نظر سے گزری یا گزاری گئی۔ اس کے بعد جب وہ لاہور آئے تو انہوں نے خواہش ظاہر کی کہ میں اس شاعر سے ملنا چاہتا ہوں جس نے یہ نظم لکھی تھی۔ اب کیا تھا! نفاذ قانون کے ادارے (پاکستان) اور خفیہ پولیس اور نوکر شاہی کا پورا عملہ حرکت میں آگیا اور ساغر کی تلاش ہونے لگی۔ لیکن صبح سے شام تک کی پوری کوشش کے باوجود وہ ہاتھ‍ نہ لگا۔ اس کا کوئی ٹھور ٹھکانہ تو تھا نہیں، جہاں سے وہ اسے پکڑ لاتے۔ پوچھ‍ گچھ‍ کرتے کرتے سر شام پولیس نے اسے پان والے کی دوکان کے سامنے کھڑے دیکھ‍ لیا۔ وہ پان والے سے کہہ رہا تھا کہ پان میں قوام ذرا زیادہ ڈالنا۔ پولیس افسر کی باچھیں کھل گئیں کہ شکر ہے ظلّ سبحانی کے حکم کی تعمیل ہو گئی۔ انہوں نے قریب جا کر ساغر سے کہا کہ آپ کو حضور صدر مملکت نے یاد فرمایا ہے۔ ساغر نے کہا:
بابا ہم فقیروں کا صدر سے کیا کام! افسر نے اصرار کیا، ساغر نے انکار کی رٹ نہ چھوڑی۔ افسر بے چارا پریشان کرے تو کیا کیونکہ وہ ساغر کو گرفتار کرکے تو لے نہیں جا سکتا تھا کہ اس نے کوئی جرم نہیں کیا تھا اور اسے کوئی ایسی ہدایت بھی نہیں ملی تھی، جرنیل صاحب تو محض اس سے ملنے کے خواہشمند تھے اور ادھر یہ "پگلا شاعر” یہ عزت افزائی قبول کرنے کو تیار نہیں تھا۔ اب افسر نے جو مسلسل خوشامد سے کام لیا، تو ساغر نے زچ ہو کر اس سے کہا:
ارے صاحب، مجھے گورنر ہاؤس میں جانے کی ضرورت نہیں۔ وہ مجھے کیا دیں گے۔ دو سو چار سو، فقیروں کی قیمت اس سے زیادہ ہے۔ جب وہ اس پر بھی نہ ٹلا تو ساغر نے گلوری کلے میں دبائی اور زمین پر پڑی سگرٹ کی خالی ڈبیا اٹھا کر اسے کھولا۔ جس سے اس کا اندر کا حصہ نمایاں ہو گیا۔ اتنے میں یہ تماشا دیکھنے کو ارد گرد خاصی بھیڑ جمع ہو گئی تھی۔ ساغر نے کسی سے قلم مانگا اور اس کاغذ کے ٹکڑے پر یہ شعر لکھا:

جس عہد میں لٹ جائے فقیروں کی کمائی
اس عہد کے سلطان سے کچھ بھول ہوئی
ساغر صدیقی بقلم خود


 
تبصرہ کریں

Posted by پر 12 اگست, 2017 in شاعری

 

ٹیگز:

میں کاغذ کے سپاہی کاٹ کر لشکر بناتا ہوں

دلوں میں درد بھرتا آنکھ میں گوہر بناتا ہوں
جنہیں مائیں پہنتی ہیں میں وہ زیور بناتا ہوں 
غنیم وقت کے حملے کا مجھ کو خوف رہتا ہے
میں کاغذ کے سپاہی کاٹ کر لشکر بناتا ہوں 
پرانی کشتیاں ہیں میرے ملاحوں کی قسمت میں
میں ان کے بادباں سیتا ہوں اور لنگر بناتا ہوں 
یہ دھرتی میری ماں ہے اس کی عزت مجھ کو پیاری ہے
میں اس کے سر چھپانے کے لیے چادر بناتا ہوں 
یہ سوچا ہے کہ اب خانہ بدوشی کر کے دیکھوں گا
کوئی آفت ہی آتی ہے اگر میں گھر بناتا ہوں 
حریفان فسوں گر مو قلم ہے میرے ہاتھوں میں
یہی میرا عصا ہے اس سے میں اژدر بناتا ہوں 
مرے خوابوں پہ جب تیرہ شبی یلغار کرتی ہے
میں کرنیں گوندھتا ہوں چاند سے پیکر بناتا ہوں 
(سلیم احمد ) 

 
تبصرہ کریں

Posted by پر 19 جولائی, 2017 in Uncategorized

 

ٹیگز:

سعدی- سرایت کر گیا مجھ میں ،ہم نشینی کا جمال

گِلے خوش بوئے در حمّام روزے
رسید از دستِ مخدومے بہ دستم
خوشبودار مٹی حمام میں تھی، ایک دن
میرے مخدوم  کے ہاتھو ں وہ مجھ تک پہنچی 

بدو گفتم کہ مشکی یا عبیری
کہ از بوئے دل آویزِ تو مستم
مشک ہے یا عبیر ، یہ پوچھا ،میں نے  اُس سے
دل میں آویزاں ہو ئی  مہک تیری ، مستی بھری

بگفتا من گِلے ناچیز بُودم
و لیکن مدّتے با گُل نشستم
میں تھی اِک  ناچیزمٹی صدیوں سے، وہ بولی
مگر مجھ کو ملی صحبت  اِک پھولِ خوش بو دار کی 

جمالِ ہمنشیں در من اثَر کرد
وگرنہ من ہمہ خاکم کہ ہستم
سرایت کر گیا  مجھ میں ،ہم نشینی  کا جمال
 ورنہ میری ہستی تھی ہمیشہ خاک کی 

(شیخ سعدی شیرازی )
(ترجمہ: مہاجرزادہ  )
 
تبصرہ کریں

Posted by پر 8 جولائی, 2017 in شاعری

 

ٹیگز: